03 ستمبر, 2014 | 7 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

غیر آئینی سیٹ اپ قائم کرنے کی سازش کا انکشاف

سینیٹر رضا ربانی۔ فائل فوٹو۔۔۔
سینیٹر رضا ربانی۔ فائل فوٹو۔۔۔

اسلام آباد: پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے سینئر رہنما سینیٹر رضا ربانی نے انکشاف کیا ہے کہ ملک میں دو تین سال کے لیے غیر آئینی سیٹ اپ قائم کرنے کی سازش کی جارہی ہے۔

پیر کو اسلام آباد میں میڈیا کےنمائندوں سے غیر رسمی گفتگو میں رضا ربانی کا کہنا ہے کہ چیف الیکشن کمشنر یا الیکشن کمیشن کے کسی ممبر کو ہٹانے کے لیے آئین میں وضح کردہ طریقے کے علاوہ کوئی اور راستہ نہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ انتخابات سے پہلے الیکشن کمیشن کو تحلیل کیے جانے کا اقدام غیر آئینی ہو گا۔

رضا ربانی نے کہا کہ غیر جمہوری قوتوں کی خواہش ہے کہ انتخابی عمل کسی  بھی طرح  ملتوی کیا جائے۔

ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ ملک میں انیس سو ستتر کے الیکشن جیسی صورتحال پیدا کی جا رہی ہے اور جمہوری عمل پر تلوار لٹک رہی ہے۔

ان کا مزید کہنا ہے کہ تمام جمہوری قوتیں غیر جمہوری قوتوں کے خلاف متحد ہو جائیں۔

اس حصے سے مزید

مناسب خوراک کی کمی اور تھکاوٹ انقلابیوں پر اثرانداز ہونے لگی

یہ بدقسمتی ہے کہ یہ احتجاجی مظاہرین اس طرح کے مضر صحت ماحول میں رہنے پر مجبور ہیں۔

برطانیہ کا شہریوں کو پاکستان کے سفر پر انتباہ

سفارت کار، سرکاری وفود اور شہریپاکستان کے اپنے سفر پر نظرثانی کریں، دفتر خارجہ و کامن ویلتھ۔

آصف زرداری ملکی سیاسی بحران کے حل میں کردار ادا کرنے کے خواہشمند

آصف علی زرداری نے وفاقی دارالحکومت میں قیام کرکے صورتحال کو حل کرنے کے لیے کردار ادا کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔


تبصرے بند ہیں.

تبصرے (1)

Israr Muhammad
29 جنوری, 2013 20:08
رضا ربانی کے بیان سے معلوم هوتا هے کۂ انتخابات کے راستے میں رکاوٹیں هیں حطره اب بھی هے میں انتحابات کے وقت پر کرانے کا حامی هوں میں کسی بھی قسم کے ٹیکنوکریٹس شریفزادوں‎ ‎صالیخین وغیرۂ کے حکومت کے حق میں نہیں هوں اگر ایسا هوآ تو جمہوریت دبارہ نہیں آئیگی اور ملک کی انتہائی بدقسمتی هو گی
سروے
مقبول ترین
قلم کار

ماڈل ٹاؤن کیس: کچھ حماقتیں

حکمرانوں کے منع کرنے پر پولیس کی جانب سے مقتولین کی ایف آئی آر درج کرنے میں تاخیر کی وجہ سے معاملہ مزید خراب ہوا۔

بیوروکریٹس کی یونین

ذاتی مفادات کے لیے چوری چھپے سیاسی ہونے سے زیادہ بہتر ہے کہ ریاست کے وسیع تر مفاد کے لیے کھلے عام سیاسی ہوا جائے۔

بلاگ

ڈرامہ ریویو: 'لا'...الجھتے رشتوں کی کہانی

ڈرامہ پرفیکٹ نہیں بھی تھا تو بھی یہ ان ڈراموں میں سے ایک ضرور تھا جسے دیکھ کر بیزاری کا احساس نہیں ہوتا۔

مووی ریویو : 'راجہ نٹور لال' سٹیریو ٹائپنگ کا شکار ہوگئی

یہ فلم نہ تو مزاح پر پوری اترتی ہے اور نہ ہی اس میں اتنا تھرلر ہے جو اسے ذہن میں نقش کر دے۔

سستا خون: براۓ انقلاب

"انقلاب" سیاست چمکانے کے لیے ایک خوشنما لفظ بن چکا ہے، اور اسے مزید چمکانے کے لیے کارکنوں کا سستا خون بھی دستیاب ہے۔

سیاست اور اخلاقیات

پتہ نہیں وہ کون سے ملک یا قومیں ہوتی ہیں جن کے عہدیدار کسی بھی ناکامی کی صورت میں فوراً اپنے عہدے سے مستعفی ہوجاتے ہیں۔