01 ستمبر, 2014 | 5 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

عام انتخابات کے لیے حتمی ضابطہ اخلاق جاری

۔۔۔۔۔فائل فوٹو
۔۔۔۔۔فائل فوٹو

اسلام آباد: الیکشن کمیشن نے عام انتخابات کے لیے حتمی ضابطہ اخلاق جاری کردیا،حتمی ضابطہ اخلاق کے تحت صدر، گورنر، وزیراعظم اور وزراء انتخابی مہم میں حصہ نہیں لے سکیں گے۔

ڈان نیوز کے مطابق، الیکشن کمیشن آف پاکستان کی جانب سے جاری حتمی ضابطہ اخلاق چالیس سے چھیالیس نکات پر مشتمل ہے، جسے سیاسی جماعتوں کی مشاورت سے تیار کیا گیا ہے۔

انتخابی ضابطہ اخلاق کے مطابق صدر، گورنر، وزیراعظم وزرا، مشیروں کے انتخابی مہم میں حصہ لینے پر پابندی ہوگی جبکہ فنڈز کے اجرا، ترقیاتی سکیموں اور سرکاری مشینری کا استعمال ممنوع ہوگا۔

اس کے علاوہ خواتین کو الیکشن میں حصہ لینے یا ووٹ ڈالنے سے نہیں روکا جائے گا، خواتین کو ووٹ ڈالنے سے روکنے کیلئے سیاسی جماعتیں آپس میں کوئی معاہدہ بھی نہیں کریں گی۔

انتخابی ضابطہ اخلاق کے مطابق پولنگ سٹیشنز کی ایک سو گز کی حدود میں ووٹ مانگنے پر پابندی ہوگی اور پولنگ اسٹیشن کی چار سو گز کی حدود کے اندر انتخابی مہم بھی نہیں چلائی جاسکے گی۔

خیال رہے کہ انتخابی مہم کے دوران وال چاکنگ اور لاؤڈ سپیکر کے استعمال پر پابندی ہوگی۔

امیدوار انتخابی اخراجات کیلئے اکاؤنٹ مختص کریں گے، اور انتخابی اخراجات کی رسیدیں بھی رکھیں گے تاہم انتخابی مہم کے دوران امیدواران پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا پر دباؤ نہیں ڈالا جائے گا۔

انتخابی ضابطہ اخلاق میں مزید کہا گیا ہے کہ پولنگ کے ایک دن بعد بھی اسلحہ کی نمائش پر پابندی ہوگی، انتخابی شیڈول جاری ہونے سے نتائج آنے تک ڈی آر اوز اور آر اوز کو درجہ اول مجسٹریٹ کے اختیارات حاصل ہوں گے جبکہ ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی پر جرمانہ اور نااہلی کی سزا ہوگی۔

اس حصے سے مزید

شاہراہِ دستور پر صحافت ایک جرم ہے

میڈیا کے نمائندے جو کچھ منظر میں ہوتا ہے، وہی ناظرین کو دکھاتے ہیں، لیکن شاہراہِ دستور پر ان کا یہ فرض جرم بن گیا تھا۔

موجودہ سیاسی بحران، سپریم کورٹ کی ثالثی کی پیشکش

عدالت نے تحریک انصاف اورعوامی تحریک کے وکلاء کو قیادت سے مشورے کے لیے ایک گھنٹہ کا وقت دیا ہے۔

آرمی چیف کی وزیراعظم سے اہم ملاقات جاری

اس ملاقات میں آرمی چیف گزشتہ روز ہونے والی کور کمانڈرز کانفرنس میں ہونے والے فیصلوں سے وزیراعظم کو آگاہ کریں گے۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

مودی اور مسئلہ کشمیر

کیا پاکستان مسئلہ کشمیر کو ایسے ہی رہنے دینا چاہتا ہے، تاکہ کشمیر سے زیادہ اہم افغانستان کے مسئلے پر توجہ دے سکے؟

اسلام آباد کا تماشا

عمران خان کو یہ تسلیم کرنا چاہیے کہ جوڈیشل کمیشن ایک کمزور وزیر اعظم کے اثر و رسوخ سے آزاد ہو کر تحقیقات کر سکے گا.

بلاگ

نوازشریف: قوت فیصلہ سے محروم

نواز شریف اپنے بادشاہی رویے کی وجہ سے پھنس چکے ہیں، جو فیصلے انہیں چھ ماہ پہلے کرنے چاہیے تھے وہ آج کر رہے ہیں۔

حالیہ بحران پر کچھ سوالات

مستقبل میں کیا ہو گا، بحران کا کیا حل نکلے گا، ان سوالات کے جوابات موجود نہیں ہیں، پر اس حوالے سے کئی سوالات موجود ہیں۔

پکوانی کہانی- سندھی بریانی

ہر قسم کی بریانیوں میں سے یہ بریانی منفرد حیثیت رکھتی ہے جو سندھی طریقے سے بہت زیادہ مصالحوں کے ساتھ تیار ہوتی ہے۔

‫ڈرامہ ریویو: وہ۔۔۔ دوبارہ (خوف و دہشت کا احساس)

انسان چاہے بد روحوں سے جتنا بھی ڈرے مگر ان پر بنی فلموں یا ڈراموں کو دیکھنے کا شوق پھر بھی اس کا پیچھا نہیں چھوڑتا۔