21 ستمبر, 2014 | 25 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

عام انتخابات کے لیے حتمی ضابطہ اخلاق جاری

۔۔۔۔۔فائل فوٹو
۔۔۔۔۔فائل فوٹو

اسلام آباد: الیکشن کمیشن نے عام انتخابات کے لیے حتمی ضابطہ اخلاق جاری کردیا،حتمی ضابطہ اخلاق کے تحت صدر، گورنر، وزیراعظم اور وزراء انتخابی مہم میں حصہ نہیں لے سکیں گے۔

ڈان نیوز کے مطابق، الیکشن کمیشن آف پاکستان کی جانب سے جاری حتمی ضابطہ اخلاق چالیس سے چھیالیس نکات پر مشتمل ہے، جسے سیاسی جماعتوں کی مشاورت سے تیار کیا گیا ہے۔

انتخابی ضابطہ اخلاق کے مطابق صدر، گورنر، وزیراعظم وزرا، مشیروں کے انتخابی مہم میں حصہ لینے پر پابندی ہوگی جبکہ فنڈز کے اجرا، ترقیاتی سکیموں اور سرکاری مشینری کا استعمال ممنوع ہوگا۔

اس کے علاوہ خواتین کو الیکشن میں حصہ لینے یا ووٹ ڈالنے سے نہیں روکا جائے گا، خواتین کو ووٹ ڈالنے سے روکنے کیلئے سیاسی جماعتیں آپس میں کوئی معاہدہ بھی نہیں کریں گی۔

انتخابی ضابطہ اخلاق کے مطابق پولنگ سٹیشنز کی ایک سو گز کی حدود میں ووٹ مانگنے پر پابندی ہوگی اور پولنگ اسٹیشن کی چار سو گز کی حدود کے اندر انتخابی مہم بھی نہیں چلائی جاسکے گی۔

خیال رہے کہ انتخابی مہم کے دوران وال چاکنگ اور لاؤڈ سپیکر کے استعمال پر پابندی ہوگی۔

امیدوار انتخابی اخراجات کیلئے اکاؤنٹ مختص کریں گے، اور انتخابی اخراجات کی رسیدیں بھی رکھیں گے تاہم انتخابی مہم کے دوران امیدواران پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا پر دباؤ نہیں ڈالا جائے گا۔

انتخابی ضابطہ اخلاق میں مزید کہا گیا ہے کہ پولنگ کے ایک دن بعد بھی اسلحہ کی نمائش پر پابندی ہوگی، انتخابی شیڈول جاری ہونے سے نتائج آنے تک ڈی آر اوز اور آر اوز کو درجہ اول مجسٹریٹ کے اختیارات حاصل ہوں گے جبکہ ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی پر جرمانہ اور نااہلی کی سزا ہوگی۔

اس حصے سے مزید

اسلام آباد دھرنوں کیلئے پولیس کا سیکیورٹی پلان مسترد

نئے چیف کمشنر ذوالفقار حیدرنے پولیس کو دو دن میں نیا سیکیورٹی پلان بنانے کی ہدایت کر دی ہے۔

دو نئے پولیو کیسز کی تصدیق

ایک کیس کا تعلق خیبر پختونخوا جبکہ دوسرے کا تعلق فاٹا سے ہے، نیشنل انسٹیٹیوٹ آف ہیلتھ۔

تحریک انصاف کا لندن ملاقات کا اقرار، حکومت نے وضاحت مانگ لی

شاہ محمودقریشی نےکہاہےکہ عمران خان اورطاہرالقادری میں معاہدہ نہیں ہواجبکہ سعدرفیق کےمطابق ملاقات پوشیدہ کیوں رکھی گئی؟


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

پاکستان کی "مڈل کلاس" بغاوت

پاکستان کے مڈل کلاس لوگ ہی جمہوریت کے سب سے بڑے مخالف ہیں اور کچھ کیسز میں تو جمہوریت کی مخالفت بغاوت کی حد تک شدید ہے۔

!میرے پیارے اسلام آباد

میں آپ سے معافی چاہتا ہوں کہ میں نے آپ کی جانب دو دھرنے بھیجے ہیں، جنہوں نے آپ کا امن و سکون تباہ کر دیا ہے۔

بلاگ

بلوچ نیشنلزم میں زبان کا کردار

لسانی معاملات پر غیر دانشمندانہ طریقہ سے اصرار مزید ناراضگی اور پیچیدگیوں کا سبب بن سکتا ہے، جو شاید مناسب قدم نہیں۔

خواندگی کا عالمی دن اور پاکستان

تعلیم کو سرمایہ کاروں کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا گیا ہے جن کے لیے تعلیم ایک جنس ہے جسے بیچ کر منافع کمایا جاسکتا ہے-

ڈرامہ ریویو: چپ رہو - حساس ترین موضوع پر بہترین پیشکش

زیادتی جیسے واقعات ہر وقت خبروں میں رہتے ہیں اس حوالے سے یہ ڈرامہ شعور اجاگر کرنے میں اہم کردار ادا کرسکتا ہے۔

میں باغی ہوں

اس ملک میں کہیں قانون کی حکمرانی نہیں، ہر جگہ لوٹ مار مچی ہے- کسی کو قانون کا پاس نہیں- تبدیلی آئی تو سب کا احتساب ہوگا-