03 ستمبر, 2014 | 7 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

عدالت کا 423 کراچی پولیس افسران معطل کرنے کا حکم

۔—فائل فوٹو
۔—فائل فوٹو

کراچی: کراچی بدامنی عمل درآمد کیس کی سماعت کےدوران سپریم کورٹ نے چارسو تیئس پولیس افسران کو معطل کرنے کا حکم دیتے ہوئے آئی جی پولیس فیاض لغاری کو شوکاز نوٹس جاری کردیا ہے۔ کیس کی سماعت کل تک ملتوی کردی گئی۔

جسٹس انور ظہیر جمالی کی سربراہی میں قائم لارجر بینچ نے سپریم کورٹ کراچی رجسٹری میں کراچی بدامنی عمل درآمد کیس کی سماعت کی۔

سماعت کے دوران سپرریم کورٹ نے آئی جی سندھ فیاض لغاری پر برہم ہوتے ہوئے کہا کہ محکمہ میں خامیوں اورخرابیوں کے ذمہ  وہ خود ہیں۔

عدالت نے انہیں شوکاز نوٹس جاری کیا۔

عدالت نے کہا کہ سنگین جرائم میں ملوث اہلکار اب بھی ڈیوٹی انجام دے رہے ہیں اور جرائم پیشہ پولیس افسران حساس مقامات پر بھی تعینات ہیں۔

گزشتہ روز ہونے والی سماعت میں سپریم کورٹ میں چیف الیکشن کمیشن کی جانب سے کراچی میں ازسر نو انتخابی حلقہ بندیوں کے حکم پر نظرثانی کی درخواست دائر کردی گئی تھی جبکہ عدالت نے متحدہ قومی موومنٹ (ایم کیو ایم) کی جانب سے دونوں درخواستیں واپس لینے پر کیس خارج کر دیا تھا۔

جسٹس انور ظہیر نے کہا تھا کہ کراچی میں ٹریفک جام کے دوران شہریوں سے لوٹ مار معمول بن چکی ہے پولیس اور رینجرز تماشائی بنے ہوئے ہیں۔

اس حصے سے مزید

حیدر آباد: عمارت گرنے سے 13 افراد ہلاک، متعدد زخمی

چوڑی پاڑہ میں گرنے والی تین منزلہ عمارت کے ملبے تلے دب کر مرنے والوں میں خواتین اور بچے بھی شامل ہیں۔

قحط کا شکار تھر، لوگ غربت کے باعث خودکشی کر رہے ہیں

محض سات مہینوں کے اندر تھرپارکر ضلع میں اکتیس افراد غربت کے باعث موت کو گلے لگا چکے ہیں۔

وزیراعظم، وزیرداخلہ کی نااہلی کے لیے درخواست دائر

سندھ ہائی کورٹ میں دائر درخواست میں استدعا کی گئی ہے کہ نواز شریف کو آرٹیکل باسٹھ اور تریسٹھ کے تحت نااہل قرار دیا جائے


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

ماڈل ٹاؤن کیس: کچھ حماقتیں

حکمرانوں کے منع کرنے پر پولیس کی جانب سے مقتولین کی ایف آئی آر درج کرنے میں تاخیر کی وجہ سے معاملہ مزید خراب ہوا۔

بیوروکریٹس کی یونین

ذاتی مفادات کے لیے چوری چھپے سیاسی ہونے سے زیادہ بہتر ہے کہ ریاست کے وسیع تر مفاد کے لیے کھلے عام سیاسی ہوا جائے۔

بلاگ

ڈرامہ ریویو: 'لا'...الجھتے رشتوں کی کہانی

ڈرامہ پرفیکٹ نہیں بھی تھا تو بھی یہ ان ڈراموں میں سے ایک ضرور تھا جسے دیکھ کر بیزاری کا احساس نہیں ہوتا۔

مووی ریویو : 'راجہ نٹور لال' سٹیریو ٹائپنگ کا شکار ہوگئی

یہ فلم نہ تو مزاح پر پوری اترتی ہے اور نہ ہی اس میں اتنا تھرلر ہے جو اسے ذہن میں نقش کر دے۔

سستا خون: براۓ انقلاب

"انقلاب" سیاست چمکانے کے لیے ایک خوشنما لفظ بن چکا ہے، اور اسے مزید چمکانے کے لیے کارکنوں کا سستا خون بھی دستیاب ہے۔

سیاست اور اخلاقیات

پتہ نہیں وہ کون سے ملک یا قومیں ہوتی ہیں جن کے عہدیدار کسی بھی ناکامی کی صورت میں فوراً اپنے عہدے سے مستعفی ہوجاتے ہیں۔