02 اکتوبر, 2014 | 6 ذوالحجہ, 1435
ڈان نیوز پیپر

توہین عدالت قانون؛ سماعت ۲۳ جولائی کو ہوگی

سپریم کورٹ.— فائل فوٹو اے ایف پی

کوئٹہ: سپریم کورٹ نے توہین عدالت  کے نئے منظور کردہ قانون کے خلاف دائر درخواست پر اٹارنی جرنل اور وفاق کو ۲۳ جولائی کے لیے نوٹس جاری کردیےہیں۔  

جمعہ کے روز سپریم کورٹ کوئٹہ رجسٹری میں توہین عدالت قانون کے خلاف درخواست کی سماعت ہوئی۔ جس میں درخواست گزار باز محمد کاکڑ نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ یہ قانون آئین کی بنیادی شقوں سے متصادم ہے۔ آرٹیکل دو اے عدلیہ کی آزادی کی ضمانت دیتا ہے جبکہ آرٹیکل پچیس کے تحت تمام شہریوں کے حقوق برابر ہیں۔

چیف جسٹس نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ دلائل سن کر محسوس ہوتا ہے کہ عدالت صبح فیصلہ کرے گی اور شام کو اسے رد کر دیا  جائے گا۔ جو لوگ ملک چلاتے ہیں انھیں آئین کی توہین نہیں بلکہ پاسداری کرنی چاہئے۔

معروف قانون دان اطہر من اللہ نے اپنے دلائل میں کہا کہ آئین کے آرٹیکل ایک سو نوے کے مطابق تمام ایگزیکٹیو بھی آئین پر عمل درآمد کرنے کے پابند ہیں۔

سپریم کورٹ نے اس نوعیت کے تمام مقدمات کو یکجا کرتے ہوئے حکم دیا کہ ان تمام درخواستوں کی سماعت ۲۳جولائی کو اسلام آباد میں ہوگی۔

ادھر سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں بھی مقامی وکیل نے توہین عدالت کے قانون کو چیلنج کردیا۔ درخواست گزار نے موقف اختیار کیا ہے کہ نیا قانون توہین عدالت قانون دوہزار بارہ، صدر آصف علی زرداری کی مبینہ کرپشن کیخلاف سوئس حکام کو خط نہ لکھنے پر وزیراعظم راجہ پرویز اشرف کو ممکنہ توہین عدالت کی کاروائی سے بچانے کےلیے بنایا گیا ہے۔ یہ قانون عدلیہ پر حملہ اور آئین توڑنے کے مترادف ہے۔

صرف دو روز پہلے بل کو پارلیمنٹ کے دونوں ایوانوں میں پیش کرکے منظوری حاصل کی گئی تھی۔ حزبِ اختلاف کی اکثریت اور خود کئی حکومتی ارکان کی مخالفت کے باوجود اسے منظور کرالیا گیا تھا۔

منظور کردہ بل پر جمعرات کو صدرِ آصف علی زرداری نے دستخط کیےتھے۔ صدر کی توثیق کے بعد، پارلیمنٹ کے منظور کردہ توہینِ عدالت بل کو قانون کا درجہ حاصل ہوگیا ہے۔

اس حصے سے مزید

پی اے ٹی کا عید پر دھرنا جاری رکھنے کا فیصلہ

اگرعمران خان ڈی چوک میں عید منائیں گے تو ہم بھی ایسا ہی کریں گے، پی اے ٹی ترجمان۔

الیکشن کمیشن اراکین اسمبلی کو معطل کرنے کے اختیارات کا خواہاں

کمیشن نے اثاثوں کی تفصیلات جمع نہ کرانے والے اراکین کی رکنیت 60 دنوں تک معطل کرنے کی تجویز دی ہے۔

لائن آف کنٹرول: ہندوستان کی جانب سے بلا اشتعال فائرنگ

انٹر سروسز پبلک ریلیشنز کے مطابق انڈین فورسز نے ایل او سی پر باغ سیکٹر میں فائرنگ کی جس کا بھر پور جواب دیا گیا۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

ماؤں اور بچوں کے قاتل ہم

پاکستان سے کم فی کس آمدنی رکھنے والے ممالک پیدائش کے دوران ماؤں اور بچوں کی اموات پر قابو پا چکے ہیں۔

تبدیلی کا پیش خیمہ

اکثر ایسے بڑے واقعات پیش آتے ہیں جو تبدیلی کے عمل کو تیز کردیتے ہیں، مگر ایسے حالات کسی فرد کے پیدا کردہ نہیں ہوتے۔

بلاگ

!گو نواز گو

اس ملک میں پڑھے لکھے لوگوں کی قدر ہی نہیں۔ جب تک پڑھے لکھوں کو وی آئی پی پروٹوکول نہیں دیا جاتا یہ ملک ترقی نہیں کرسکتا

قدرتی آفات اور پاکستان

قدرتی آفات سے پہلے انتظامات پر ایک ڈالر جبکہ بعد میں سات ڈالر خرچ ہوتے ہیں، اس کے باوجود ہم پہلے سے انتظامات نہیں کرتے۔

مقابلہ خوب ہے

کوئی دنیا کے در در پر پھیلے ہمارے کشکول کی زیارت کرے، پھر اس میں خیرات ڈالنے والوں کو فتح کرنے کے ہمارے عزم بھی دیکھے۔

پاکستان میں ذہنی بیماریاں اور ہماری بے حسی

آخر ذہنی بیماریوں کے شکار کتنے اور لوگوں کو اپنے گھرانوں کی بے حسی، اور معاشرے کی جانب سے ٹھکرائے جانے کو جھیلنا پڑے گا؟