20 اپريل, 2014 | 19 جمادی الثانی, 1435
ڈان نیوز پیپر

حلب اور دمشق میں خونریز جھڑپیں جاری، این جی او

حلب میں تباہ ہونے والی ایک عمارت۔ رائٹرز فوٹو

بیروت: شام کے دو سب سے بڑے شہروں حلب اور دمشق میں ہفتہ کو بھی خونریز جھڑپیں جاری رہیں جبکہ انسانی حقوق کے گروپ کے مطابق ملک بھر میں تشدد سے کم از کم تیرہ افراد ہلاک ہوئے۔

انسانی حقوق کیلئے شام کے مبصرین کے مطابق گزشتہ رات حلب میں باغی افواج ازا کے ضلع سے پسپا ہوگئی ہیں جہاں ریاستی ٹیلی ویژن کی عمارت واقع ہے۔

برطانیہ میں قائم اس مبصر ادارے نے بتایا کہ باغی افواج نے وہاں دھماکہ خیز مواد نصب کیا اور حکومتی فورسز نے علاقے پر گولہ باری کی اور اس کے بعد باغی اس علاقے سے نکل گئے۔

مبصر گروپ کے ڈائریکٹر رمی عبدالرحمان نے اے ایف پی کو بتایا کہ باغیوں کی جانب سے عمارت پر داخل ہونے کی کوشش کے بعد لڑائی کا آغاز ہوا تھا۔

سرکاری خبرایجنسی سنا کے مطابق عسکریت پسند گروپ نے شہریوں اور حلب میں ریاستی ٹی وی کی عمارت پر حملہ کیا،جہاں پر فوج نے اس کا دفاع کیا۔

مبصر کے مطابق صلاح الدین اور سیف دوالا کے اضلاع میں بھی ہفتہ کے روز جھڑپیں ہوئی ۔

انھوں نے مزید کہا کہ جھڑپوں کے دوران ہیلی کاپٹر اور لڑکا طیارے حلب کے اوپر دیکھے گئے۔

اس کے علاوہ دمشق کے جنوبی علاقے تدامن کے قریب پرتشدد جھڑپیں ہوئی۔

فوج نے ہفتہ کی صبح مضافاتی علاقوں پر گولہ باری بھی کی،جس کے متعلق مبصر نے بتایا کہ یہ اس ضلع میں اب تک شدید ترین تشدد تھا۔

دارالحکومت کے جوبر کے علاقے میں بھی تشدد پھوٹ پڑا اور گروپ نے مزید بتایا کہ ہفتہ کو دمشق صوبہ میں تشدد سے کم از کم چھ افراد ہلاک ہوئے۔

علاوہ ازیں مزید سات افراد بھی ہلاک ہوئے،جن میں سے چھ مشرقی دائر ازور اور ایک ساحلی صوبے لتاکیا میں ہلاک ہوا۔

اس حصے سے مزید

نیروبی دھماکوں میں چھ افراد ہلاک

ذیادہ آبادی والے ایک علاقے میں دو ہوٹلوں اور ایک کلینک میں لگاتار دھماکے ، پچیس افراد زخمی ۔

نائیجیریا: عسکریت پسندوں کا کالج پر حملہ، 43 ہلاک

شدت پسندوں نے کالج کی رہائشی عمارت پر گولہ باری کرنے کے بعد فائرنگ کی اور طالب علموں کو چھریوں کے وار سے بھی ہلاک کیا۔

شمالی نائیجیریا میں بوکو حرم کا حملہ، 60 ہلاک

حملے کے بعد فضائیہ کے جیٹ طیاروں نے بھاگتے ہوئے عسکریت پسندوں کو نشانہ بنایا اور انہیں ہلاک کیا گیا۔


تبصرے بند ہیں.
مقبول ترین
بلاگ

سچ، گولی اور بے بس جرنلسٹ

حامد میر پر حملہ ایک بار پھر صحافی برادری کی بے بسی کی طرف اشارہ کرتا ہے

2 - پاکستان کی شہری تاریخ ... ہمیں سب ہے یاد ذرا ذرا

بھٹو حکومت کے ابتدائی سالوں میں قوم کا مزاج یکسر تبدیل ہو گیا تھا، کیونکہ ملک ایک نئے پاکستان کی طرف بڑھ رہا تھا-

دو قومی نظریہ اور ہندوستانی اقلیتیں

دو قومی نظریہ مسلمانوں اور ہندوؤں میں تو تفریق کرتا ہے لیکن دیگر اقلیتوں، خاص کر دلتوں کو یکسر فراموش کرتا ہے۔

ریویو: بھوت ناتھ - ریٹرنز

مرکزی کرداروں سے لیکر سپورٹنگ ایکٹرز سب اپنی جگہ کمال کے رہے اور جس فلم میں بگ بی ہوں اس میں چار چاند تو لگ ہی جاتے ہیں۔