29 اگست, 2014 | 2 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

خط نہ لکھنے پر پی پی میں اختلافات نہیں، کاہرہ

وزیر اعظم راجہ پرویز اشرف۔—فائل فوٹو

اسلام آباد: سوئس حکام کو خط نہ لکھنے پر حکمران جماعت میں اختلافات کی خبروں کی تردید کرتے ہوئے  وزیر اطلاعات قمرزمان کاہرہ نے کہا ہے وزیراعظم کو گھر بھیجنے کے خلاف مزاحمت کی تجویز پر فیصلہ پارٹی اجلاس میں فیصلہ ہوگا۔ آج اسلام آباد میں وزیراعظم راجہ پرویز اشرف کی صدارت میں وفاقی کابینہ کا اجلاس ہوا۔

اجلاس میں وزیردفاع نوید قمر کی سربراہی میں قائم پانچ رکنی کابینہ کمیٹی نے بلوچستان کی صورتحال پر ابتدائی رپورٹ پیش کی۔

نوید قمر نے بتایا کہ کمیٹی بلوچستان کے معاملے پر فریقین سے دس سے زائد ملاقاتیں کرچکی ہے اور ملاقاتوں کا سلسلہ تاحال جاری ہے ۔

اس موقع پر انہوں نے کابینہ سے مکمل رپورٹ تیار کرنے کے لیے مزید مہلت مانگی جس کے بعد رپورٹ پر غور آئندہ اجلاس تک موخر کر دیا گیا ۔

اجلاس سے خطاب کے دوران وزیراعظم نے کہا کہ عام انتخابات کی تیاریاں شروع کی جانی چاہیئں۔

ان کا کہنا تھا کہ پاکستان پیپلزپارٹی آزاد اور شفاف انتخابات پر یقین رکھتی ہے، عام انتخابات کے نتائج کو کھلے دل سے تسلیم کیا جائےگا۔

انہوں نے کہا کہ توانائی کے بحران کا حل حکومت کی اولین ترجیح ہے اور تمام وسائل کو بروئےکار لاتے ہوئے توانائی کے بحران کو حل کیا جائےگا۔

اجلاس میں خصوصی کمیٹی نے ملک میں توانائی کے بحران پر قابو پانے کے لیے اقدامات سے کابینہ کو آگاہ کیا۔

بجلی کے واجبات کی وصولی اور چوری کے روک تھام کے لئے پانی وبجلی، پیٹرولیم اور خزانہ کے سیکرٹریوں پر مشتمل کمیٹی قائم کرنے کا فیصلہ بھی کیا گیا۔

کابینہ نے ہندوؤں کی نقل مکانی کی خبروں پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے متعلقہ اداروں کو مسئلہ حل کرنے کی ہدایت کی۔

اجلاس کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وزیر اطلاعات و نشریات قمر زمان کائرہ نے کہا کہ عام انتخابات مقررہ وقت پر ہوں گے۔

انہوں نے کہا کہ سوئس حکام کو خط نہ لکھنے پر حکمراں جماعت میں اختلاف نہیں ہے ۔

وزیر اطلاعات نے کہا کہ سرکاری ملازمین کے اثاثے منظر عام پر لائے جائیں گے۔

اس حصے سے مزید

نواز شریف کی زبان پر بھروسہ نہیں، عمران خان

پی ٹی آئی سربراہ عمران خان کا کہنا تھا کہ ہم نے ملک کی خاطر نواز شریف سے بات چیت کی کوشش کی۔

پارلیمنٹ کے فلور پر جھوٹ بولا گیا، طاہر القادری

طاہر القادری کا کہنا تھا کہ میں ایک منٹ ضائع کیے بغیر وزیراعظم کا جھوٹ رد کرنے آیا ہوں، اگر چہ میری طبیعت ٹھیک نہیں ہے۔

آرمی چیف کی ثالثی عمران اور قادری کی خواہش تھی، وزیراعظم

قومی اسمبلی سے خطاب کرتے ہوئے وزیرِاعظم نے کہا کہ ہم جمہوریت کو مستحکم کرنے کی کوششیں کررہے ہیں۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

اسلام آباد کا تماشا

عمران خان کو یہ تسلیم کرنا چاہیے کہ جوڈیشل کمیشن ایک کمزور وزیر اعظم کے اثر و رسوخ سے آزاد ہو کر تحقیقات کر سکے گا.

جمہوریت کے تسلسل کی ضرورت

حکومت نےکس قدر عجلت میں مذاکرات کا فیصلہ کیا، اس سے معاملات کے اوپر جی ایچ کیو کی گرفت کا اچھی طرح اندازہ ہوجاتا ہے۔

بلاگ

مووی ریویو: مردانی - پاورفل کہانی، بہترین پرفارمنس

بولی وڈ اداکار رانی مکھرجی اور طاہر بھاسن دونوں ہی اپنی بولڈ پرفارمنس کے لئے تعریف کے لائق ہیں۔

عظیم مقاصد، پر راستہ؟

اس طوفان کے نتیجے میں ان چاہی افرا تفری پھیل سکتی ہے، اسلیے اچھے مقاصد کے لیے ایسے راستے اختیار نہیں کیے جانے چاہییں۔

انقلاب معافی چاہتا ہے

ڈی چوک وہ سیاسی چراغ ہے جس کو اگر ضدی شہزادے کافی حد تک رگڑ دیں تو کچھ پتا نہیں اس میں سے انقلاب کا جن نکل ہی آئے۔

پاکستان کی نوجوان نسل اور غیرت بریگیڈ

"فحاشی" ایک دماغی بیماری ہے جس کا شکار ذہن عورت کو گھر کی دہلیز سے باہر دیکھ کر شدید 'صدمے' کا شکار ہو جاتا ہے۔