30 اگست, 2014 | 3 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

افغانستان میں یوٹیوب پر پابندی

افغانستان نے یہ پابندی لیبیا میں امریکی سفیر کی ہلاکت کے بعد عائد کی ہے۔ فوٹو اے پی

کابل: افغان حکومت نے لو گوں اسلام نے ملک میں پہلی بار ویڈیوویب سائٹ یو ٹیوب پر پابندی لگا دی۔

حکومت نے یہ پابندی لوگوں کو اسلام مخالف فلم دیکھنے سے روکنے کے لیے لگائی ہے جس کی وجہ سے لیبیا میں ہونے والے فسادات میں امریکی سفارت کار اور تین اہلکار ہلاک ہو گئے تھے۔

وزارت مواصلات کے آفیشل اجمل نے اے ایف پی کو بتایا کہ وزارت اطلاعات اور ثقافت کی جانب سے موصول شدہ ہدایات کے بعد وزارت مواصلات نے تمام سروس فراہم کرنے والے اداروں کو حکم دیا ہے کہ وہ یوٹیوب کو بلاک کردیں۔

انہوں نے کہا کہ یوٹیوب کو اس وقت تک بلاک رکھا جائے گا جب تک اس پر سے ہتک آمیز فلم کے مواد کو نہیں ہٹایا جاتا۔

افغانستان کے صدارتی ترجمان نے اس سے قبل اس فلم کی مذمت کرتے ہوئے اسے توہین آمیز قرار دیا تھا اور اسے نشر نہ کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔

اس مووی کو متنازع امریکی پادری ٹیری جان نے فروغ دیا ہے۔

یاد رہے کہ ٹیری جان وہی پادری ہیں جنہوںنے قرآن مجید کے نسخے جلانے کا اعلان کرنے کے ساتھ ساتھ گراؤنڈ زیرو پر مسجد کی تعمیر کی مخالفت بھی کی تھی۔

وزارت مواصلات کے آفیشل نے کہا ہے کہ اگر ویڈیو شیئرنگ ویب سائٹ یو ٹیوب اس متنازع فلم کے تمام لنک اور فلم کے ٹریلر کو بلاک کر دیتی ہے تو ہم یوٹیوب پر سے پابندی اٹھا لیں گے۔

انہوں نے اس بات کی تصدیق کی کہ عوام میں اس بات کے اعلان سے ایک گھنٹہ قبل وہ یوٹیوب تک پہنچنے کی سہولت سے محروم ہوچکے ہیں۔

واضح رہے کہ رواں سال افغانستان میں ایک فوجی کیمپ میں امریکی فوجیوں کے ہاتھوں قرآن نذر آتش کیے جانے کے بعد فسادات میں تقریباً چالیس افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

دوسری جانب غیر ملکی خبر رساں ادارے اے پی کے مطابق لیبیا میں امریکی سفارتکار کے قتل کے بعد اس متنازع فلم کے بنانے والے روپوش ہوگئے ہیں۔

فلمساز سیم بیکائل نے نامعلوم مقام سے اے پی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ یہ ایک سیاسی فلم ہے۔

انہوں نے کہا کہ امریکہ عراق اور افغانستان میں جاری جنگ میں پہلے ہی بہت سی جانیں اور پیسے کا نقصان اٹھا چکا ہے اور ہم دراصل نظریاتی جنگ لڑ رہے ہیں۔

اس حصے سے مزید

عبداللہ کے انکار پر افغان الیکشن کا آڈٹ معطل

ڈاکٹر غنی کی ترجمان کے مطابق انہیں اقوام متحدہ اور الیکشن کمیشن پر اعتماد ہے، اور وہ اس آڈٹ کے نتائج تسلیم کریں گے۔

حقانی نیٹ ورک کے رہنماؤں کی معلومات فراہم کرنے پر رقم بڑھادی گئی

حقانی نیٹ ورک کے چار رہنماؤں کیلئے 50،50 لاکھ ڈالرکی رقم مقرر، سراج الدین حقانی کیلئے رقم بڑھا کر ایک کروڑ ڈالر کردی گئی

افغانستان : ہلمند میں فورسز کے طالبان سے مذاکرات

فوجی جنرل مذاکراتی عمل شروع ہونے کاکہہ رہےہیں جبکہ طالبان کی جانب سے ایسے کسی بھی اقدام میں شمولیت کی تردید کی جا رہی ہے


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

اسلام آباد کا تماشا

عمران خان کو یہ تسلیم کرنا چاہیے کہ جوڈیشل کمیشن ایک کمزور وزیر اعظم کے اثر و رسوخ سے آزاد ہو کر تحقیقات کر سکے گا.

جمہوریت کے تسلسل کی ضرورت

حکومت نےکس قدر عجلت میں مذاکرات کا فیصلہ کیا، اس سے معاملات کے اوپر جی ایچ کیو کی گرفت کا اچھی طرح اندازہ ہوجاتا ہے۔

بلاگ

اجتماعی سیاسی قبر

فوج کو سیاسی معاملات میں شرکت کی دعوت دینا اس بات کا ثبوت ہے کہ سیاستدان سیاسی معاملات سے نمٹنے کی طاقت نہیں رکھتے۔

مووی ریویو: مردانی - پاورفل کہانی، بہترین پرفارمنس

بولی وڈ اداکار رانی مکھرجی اور طاہر بھاسن دونوں ہی اپنی بولڈ پرفارمنس کے لئے تعریف کے لائق ہیں۔

عظیم مقاصد، پر راستہ؟

اس طوفان کے نتیجے میں ان چاہی افرا تفری پھیل سکتی ہے، اسلیے اچھے مقاصد کے لیے ایسے راستے اختیار نہیں کیے جانے چاہییں۔

انقلاب معافی چاہتا ہے

ڈی چوک وہ سیاسی چراغ ہے جس کو اگر ضدی شہزادے کافی حد تک رگڑ دیں تو کچھ پتا نہیں اس میں سے انقلاب کا جن نکل ہی آئے۔