20 ستمبر, 2014 | 24 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

افغانستان میں یوٹیوب پر پابندی

افغانستان نے یہ پابندی لیبیا میں امریکی سفیر کی ہلاکت کے بعد عائد کی ہے۔ فوٹو اے پی

کابل: افغان حکومت نے لو گوں اسلام نے ملک میں پہلی بار ویڈیوویب سائٹ یو ٹیوب پر پابندی لگا دی۔

حکومت نے یہ پابندی لوگوں کو اسلام مخالف فلم دیکھنے سے روکنے کے لیے لگائی ہے جس کی وجہ سے لیبیا میں ہونے والے فسادات میں امریکی سفارت کار اور تین اہلکار ہلاک ہو گئے تھے۔

وزارت مواصلات کے آفیشل اجمل نے اے ایف پی کو بتایا کہ وزارت اطلاعات اور ثقافت کی جانب سے موصول شدہ ہدایات کے بعد وزارت مواصلات نے تمام سروس فراہم کرنے والے اداروں کو حکم دیا ہے کہ وہ یوٹیوب کو بلاک کردیں۔

انہوں نے کہا کہ یوٹیوب کو اس وقت تک بلاک رکھا جائے گا جب تک اس پر سے ہتک آمیز فلم کے مواد کو نہیں ہٹایا جاتا۔

افغانستان کے صدارتی ترجمان نے اس سے قبل اس فلم کی مذمت کرتے ہوئے اسے توہین آمیز قرار دیا تھا اور اسے نشر نہ کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔

اس مووی کو متنازع امریکی پادری ٹیری جان نے فروغ دیا ہے۔

یاد رہے کہ ٹیری جان وہی پادری ہیں جنہوںنے قرآن مجید کے نسخے جلانے کا اعلان کرنے کے ساتھ ساتھ گراؤنڈ زیرو پر مسجد کی تعمیر کی مخالفت بھی کی تھی۔

وزارت مواصلات کے آفیشل نے کہا ہے کہ اگر ویڈیو شیئرنگ ویب سائٹ یو ٹیوب اس متنازع فلم کے تمام لنک اور فلم کے ٹریلر کو بلاک کر دیتی ہے تو ہم یوٹیوب پر سے پابندی اٹھا لیں گے۔

انہوں نے اس بات کی تصدیق کی کہ عوام میں اس بات کے اعلان سے ایک گھنٹہ قبل وہ یوٹیوب تک پہنچنے کی سہولت سے محروم ہوچکے ہیں۔

واضح رہے کہ رواں سال افغانستان میں ایک فوجی کیمپ میں امریکی فوجیوں کے ہاتھوں قرآن نذر آتش کیے جانے کے بعد فسادات میں تقریباً چالیس افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

دوسری جانب غیر ملکی خبر رساں ادارے اے پی کے مطابق لیبیا میں امریکی سفارتکار کے قتل کے بعد اس متنازع فلم کے بنانے والے روپوش ہوگئے ہیں۔

فلمساز سیم بیکائل نے نامعلوم مقام سے اے پی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ یہ ایک سیاسی فلم ہے۔

انہوں نے کہا کہ امریکہ عراق اور افغانستان میں جاری جنگ میں پہلے ہی بہت سی جانیں اور پیسے کا نقصان اٹھا چکا ہے اور ہم دراصل نظریاتی جنگ لڑ رہے ہیں۔

اس حصے سے مزید

افغانستان: بغلان میں مسجد کے باہر دھماکا، 6 ہلاک

صوبائی پولیس چیف کے ترجمان کا کہنا ہے کہ دھماکا مسجد کے باہر ہوا تاہم یہ واضح نہیں ہے کہ اس کے پیچھے کون ملوث ہے۔

افغانستان: طالبان کے حملے میں 6 پولیس اہلکار ہلاک

صوبائی پولیس چیف ترجمان کے مطابق پولیس کی جوابی کارروائی سے آٹھ طالبان بھی مارے گئے ہیں۔

کابل: امریکی سفارتخانے کے قریب خودکش حملہ،3 ہلاک

حکام کے مطابق خودکش حملہ آور بارود سے بھری ایک گاڑی میں سوار تھا، جس نے غیرملکی فوج کے ایک قافلے کو نشانہ بنایا۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

رودرہیم کا سبق

بچوں پر ہونیوالے جنسی تشدد پر ہماری شرمندگی کی سمت غلط ہے۔ شرم کی بات تو یہ ہے کہ ہم اس کو روکنے کی کوشش نہ کریں-

رکاوٹیں توڑ دو

اشرافیہ تعلیمی نظام کا بیڑہ غرق کرنے پر تلی ہوئی ہے جو خاص طور سے 1970ء کی دہائی کے بعد سے بد سے بدتر ہورہاہے۔

بلاگ

مووی ریویو: دختر -- دلوں کو چُھو لینے والی کہانی

اپنی تمام تر خوبیوں اور کچھ خامیوں کے ساتھ اس فلم کو پاکستانی نکتہ نگاہ سے پیش کیا گیا ہے۔

پھر وہی ڈیموں پر بحث

ڈیموں سے زراعت کے لیے پانی ملتا ہے، پانی پر کنٹرول سے بجلی پیدا کی جاسکتی ہے اور توانائی بحران ختم کیا جاسکتا ہے۔

شاہد آفریدی دوبارہ کپتان، ایک قدم آگے، دو قدم پیچھے

اس بات کی ضمانت کون دے گا کہ ماضی کی طرح وقار یونس اور شاہد آفریدی کے مفادات میں ٹکراؤ پیدا نہیں ہوگا۔

وارے نیارے ہیں بے ضمیروں کے

ماضی ہو یا حال، اربابِ اختیار و اقتدار کی رشوت اور بدعنوانی کے خلاف کھوکھلی بڑھکوں کی حیثیت محض لطیفوں سے زیادہ نہیں۔