01 ستمبر, 2014 | 5 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

اسلام آباد کی سیکیورٹی پاک فوج کے حوالے

اسلام آٓباد میں جمعرات کو ہونے والے پرتشدد مظاہروں کے بعد ریڈ زون اور ڈپلومیٹک اینکلیو کی حفاظت کیلئے پاک فوج کو طلب کرلیا گیا ہے ۔ اے ایف پی تصویر

اسلام آباد: اسلام آباد اور راولپنڈی میں گستاخانہ فلم کے خلاف مظاہروں میں شدت آنے کے بعد ریڈزون اور ڈپلومیٹک انکلیو کی حفاظت کیلئے پاک فوج کو طلب کرلیا گیا ہے۔

یہ فیصلہ ہزاروں مظاہرین کی جانب سے پر تشدد عمل اور توڑ پھوڑ کے بعد کیا گیا ہے ۔ مشتعل مظاہرین کی بڑی تعداد نے گستاخانہ فلم کیخلاف احتجاج کرتے ہوئے نہ صرف جلاو گھیرا کیا بلکہ ڈپلومیٹک اینکلیو کی جانب مارچ کیا۔ جب پولیس نے مظاہرین کو روکنے کی کوشش کی تو انہوں نے پولیس چوکیوں کو بھی آگ لگادی۔

پولیس نے لگ بھگ ایک ہزارسے زائد طالبعلموں کو اس وقت آنسو گیس اور ہوائی فائرنگ سے منتشر کرنے کی کوشش کی جب  انہوں نے ڈنڈے تھامے اسلام آباد کے حساس علاقوں کی جانب پیش رفت کی۔

مظاہرین کی بڑی تعداد نے سیکیوریٹی فورسز کی جانب پتھراو شروع کردیا اور بعض مظاہرین بلند سیکیوریٹی والے ریڈ زون میں داخل ہونے میں کامیاب ہوگئے۔

اس سے پہلے پولیس اور قانون نافذ کرنے والے اہلکاروں نے پہلے سے ہی حصار میں لئے گئے ڈپلومیٹک اینکلیو کی جانب بڑھنے والے مظاہرین کو پیچھے دھکیل دیا تھا۔ واضح رہے ڈپلومیٹک اینکلیو علاقے میں امریکہ ، برطانیہ اور فرانسیسی سفارتخانوں سمیت دیگر کئ ممالک کے سفارتخانے شامل ہیں۔

اسلام آباد میں مظاہرین اس کم بجٹ میں بننے والی فلم پر احتجاج کررہے تھے جسے چند ماہ قبل انٹرنیٹ پر پوسٹ کیا گیا تھا۔ فلم کے منظرِ عام پر آنے کے بعد تقریباً بیس ممالک میں شدید عوامی احتجاج کیا گیا اور اب تک پرتشدد مظاہروں میں تیس افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔

مظاہرین کو قابوکرنے پر متعین ایک پولیس افسر زمان خان نے خبر رساں ایجنسی اے ایف پی کو بتایا کہ مجھے میرے افسر نے ہجوم کو منتشر کرنے کے احکامات جاری کئے ہیں اسی لئے میں فائر کرتا ہوں تاہم میں مظاہرین کی بجائے قریبی درختوں پرگولیاں چلاتا ہوں ۔

فائرنگ کے نتیجے میں مظاہرین پہلے تتر بتر ہوگئے بعد ازاں منظم  ہوگئے اور اس مرتبہ ان کے ہاتھوں میں پتھر تھے جو انہوں نے پولیس پر برسائے۔

ڈان نیوز کے مطابق پولیس اور مظاہرین کے درمیان پر تششد واقعات میں تیرہ افراد زخمی ہوئے ہیں جن میں تین طالبعلم اور دس پولیس اہلکار شامل ہیں۔

ایک طالبعلم آصف نے بتایا کہ پولیس چاہئے کہ وہ مظاہرین کو امریکی سفارتخانے جانے کی اجازت دے۔

احتجاج میں شریک ایک اور طالبعلم ریحان احمد نے کہا کہ امریکہ اور مغرب کی جانب سے اکثر اسلام کو تضحیک کا نشانہ بنایا جاتا ہے اور آزادیِ اظہار کے نام پر حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی شان میں گستاخی کی جاتی ہے۔

تازہ ترین اطلاعات کے مطابق، اسلام آباد پولیس نے آج کے واقعات کے بعد کل سرکاری یوم احتجاج کے موقع پر خصوصی سیکیورٹی پلان مرتب کرلیا ہے۔ جس کے تحت پولیس کی نفری مختلف مقامات پر متعین کی جائے گی۔

اس حصے سے مزید

عمران، قادری کیخلاف دہشت گردی کا مقدمہ درج

دونوں رہنماؤں کے خلاف ایس ایچ او محبوب احمد کی مدعیت میں سیکریٹریٹ پولیس تھانےمیں ایف آئی آر نمبر 182 31/8 درج کی گئی۔

وزیر اعظم اور آرمی چیف کی ملاقات ختم

وزیر اعظم نواز شریف اور آرمی چیف جنرل راحیل شریف کے درمیان آج ہونے والی ملاقات ختم ہو گئی ہے۔

شاہراہِ دستور پر صحافت ایک جرم ہے

میڈیا کے نمائندے جو کچھ منظر میں ہوتا ہے، وہی ناظرین کو دکھاتے ہیں، لیکن شاہراہِ دستور پر ان کا یہ فرض جرم بن گیا تھا۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

احتیاطی نظربندی کا غلط قانون

فوجی اور سویلین حکومتوں نے باقاعدگی سے احتیاطی نظربندی کو اپنے مخالفین کو خاموش کرنے اوردھمکانے کے لیے استعمال کیا ہے۔

توجہ طلب شعبہ

بجلی کی لائنیں لگانے اور مرمت کرنے کو دنیا کے دس خطرناک ترین پیشوں میں شمار کیا جاتا ہے-

بلاگ

سیاست اور اخلاقیات

پتہ نہیں وہ کون سے ملک یا قومیں ہوتی ہیں جن کے عہدیدار کسی بھی ناکامی کی صورت میں فوراً اپنے عہدے سے مستعفی ہوجاتے ہیں۔

تاریخ کی تکرار

پولیس پر تشدد اور دہشت گردی کا الزام لگانے والے کیا اپنے گھروں پر کسی ایرے غیرے نتھو خیرے کو چڑھائی کی اجازت دیں گے؟

آبی مسائل کا ذمہ دار ہندوستان یا خود پاکستان؟

پاکستان میں پانی اور بجلی کے بحران کی وجہ پچھلے 5 عشروں سے پانی کے وسائل کی خراب مینیجمنٹ ہے۔

نوازشریف: قوت فیصلہ سے محروم

نواز شریف اپنے بادشاہی رویے کی وجہ سے پھنس چکے ہیں، جو فیصلے انہیں چھ ماہ پہلے کرنے چاہیے تھے وہ آج کر رہے ہیں۔