29 جولائ, 2014 | 1 شوال, 1435
ڈان نیوز پیپر

پشاور: عسکریت پسندوں کا تھانےاور چیک پوسٹوں پرحملہ

پولیس ہیلپ لائن۔ —فائل فوٹو

پشاور: پشاور متنی پولیس اسٹیشن اور چیک پوسٹوں پر عسکریت پسندوں کے حملے کے بعد جوابی کارروائی میں چار عسکریت پسند ہلاک ہوئے۔

جبکہ حملے میں اے ایس آئی سمیت چار پولیس اہلکار زخمی اور ایک بکتربند کو نقصان پہنچا۔

عسکریت پسندوں نے گزشتہ رات پشاور کے متنی تھانے اور فرنٹیئر روڈ پر قائم چیک پوسٹوں پر بڑا حملہ کیا۔

ذرائع کے مطابق پولیس کی جوابی کارروائی میں چار عسکریت پسند مارے گئے۔

حملے میں زخمی ہونے والے چاروں پولیس اہلکاروں کو لیڈی ریڈنگ اسپتال منتقل کردیا گیا جہاں ان کی حالت خطرے سے باہر بتائی جاتی ہے۔

دوسری جانب شہر میں مزید دو بم ناکارہ بنادئے گئے۔

اس حصے سے مزید

ٹانگ کی معذوری بھی اس اہلکار کو اپنے فرائض سے نہ روک سکی

وہ ان بموں کا مقابلہ کرنے کے لیے پرعزم ہے جو اس کے بقول عیدالفطر کے بعد پاکستانی طالبان مختلف مقامات پر نصب کرسکتے ہیں

لانگ مارچ پر حکومت سے 'ڈیل' کی تردید

عمران خان کا کہنا ہے کہ آئی ڈی پیز کے معاملے میں وفاقی حکومت اپنی ذمہ داریاں پوری نہیں کررہی۔

چودہ اگست سے بروغل فیسٹیول کا آغاز

چترال سے 260 کلومیٹر کے فاصلے پر بروغل کی جنت نظیر وادی سطح سمندر سے 13 ہزار فٹ بلندی پر واقع ہے۔


تبصرے بند ہیں.

تبصرے (1)

Raza
04 اکتوبر, 2012 16:05
Dawn news karachi ma Allama qamar al-ditta ko goli mar ker Halaq ker diya gaya mari samaj ma yeh nahi Ataa k shia ulmaa ko kou maara jata hai kia shi kafir hain? Islam kisi ko nahaq Qatal ki Ijazat nahi data, mari ek shia se baat hoi us ka kehna tha k Lashkar-e-Taiba walay na Qatal ka Fatwa jari kia howa hai. Agar Aisa hai to Firqa wariyat khbi khatam nahi ho saqti.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

جنگ اور ہوائی سفر

پرواز کرنے کا معجزہ، جو انسانی ذہانت کا خوشگوار مظہر ہے، انسان کے انتقامی جذبات اور خون کی پیاس کی نذر ہوگیا ہے

تھوڑا سا احترام

آپ ایک مایوس، خوفزدہ بیوروکریسی سے کیا توقع کرسکتے ہیں جنہیں اپنی سمت کا علم نہ ہو؟

بلاگ

ترغیب و خواہشات: رمضان کا نیا چہرہ؟

کسی مقامی رمضان ٹرانسمیشن کو لگائیں اور وہ سب کچھ جان لیں جو اب اس مقدس مہینے کے نئے چہرے کو جاننے کے لیے ضروری ہے

نائنٹیز کا پاکستان -- 1

ضیا سے مشرف کے بیچ گیارہ سال میں کبھی کرپشن کے بہانے تو کبھی وسیع تر قومی مفاد کے نام پر پانچ جمہوری حکومتیں تبدیل ہوئیں

ٹوٹے برتن

امّی کا خیال ہے کہ ایسے برتن پورے گاؤں میں کسی کے پاس نہیں۔ وہ تو ان برتنوں کو استعمال کرنے ہی نہیں دیتی

مجرم کون؟

کچھ چیزیں ڈنڈے کے زور پہ ہی چلتی ہیں، پھر آہستہ آہستہ عادت اور عادت سے فطرت بن جاتی ہیں۔