25 جولائ, 2014 | 26 رمضان, 1435
ڈان نیوز پیپر

دہشت گردوں کی نشاندہی پر ایک کروڑ انعام

وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا امیر حیدر خان ہوتی جنہوں نے ملالہ پر حملہ کرنیوالوں کی نشاندہی پر انعام کا اعلان کیا ہے۔ فائل فوٹو

پشاور: وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا امیر حیدر خان ہوتی نے ملالہ یوسف زئی پر حملے میں ملوث افراد کی نشاندہی کرنے پر 1 کروڑ روپے کا اعلان کر دیا۔

ڈان نیوز کے نمائندے ظاہر شاہ کے مطابق پشاور میں میڈیا سے گفتگو میں میاں افتخار نےبتایا کہ وزیر اعلیٰ امیر حیدر خان ہوتی نے ملالہ پر حملے کے ملزم کی نشاندہی پر ایک کروڑ روپے انعام دینے کا اعلان کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ملالہ کا آپریشن ہو گیا ہے، اس کی حالت پہلے سے بہتر ہے اور اسے بیرون ملک بھجوانے کی ضروت نہیں۔ آئندہ دو دن ملالہ کی صحت کے حوالے سے اہم ہیں جبکہ ان کو 48گھنٹے بے ہوش رکھا جائے گا۔

میاں افتخار کا کہنا تھا کہ ڈاکٹروں کی کمی کا تاثر غلط ہے، ہمارے پاس دنیا کے بہترین نیورو سرجن موجود ہیں جو خطے میں جاری دہشت گردی کی کارروائیوں کے باعث نیورو سرجری کے ایسے کیسز کے علاج میں مہارت رکھتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ ملالہ یوسف زئی کے خاندان کو مکمل تحفظ فراہم کیا جائے گا۔

میاں افتخار کا کہنا تھا کہ صوبے کو دہشت گردی کا سامنا ہے، تمام لوگوں کو سیکیورٹی دینا مشکل ہے مگر اہم افراد کو سیکیورٹی فراہم کی گئی ہے جبکہ امن کے لئے آواز اٹھانے والوں کے لیے سیکیورٹی کے انتظامات کیے جا رہے ہیں۔

اس سے قبل وفاقی وزیر داخلہ رحمٰن ملک نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا تھا کہ حملہ آوروں کی شناخت ہو گئی ہے اور وہ کہیں نہیں بھاگ سکتے۔

انہوں نے کہا تھا کہ دہشت گردوں کو گرفتار کر کے قرار واقعی سزا دی جائے گی۔

یاد رہے کہ منگل کو سوات میں ملالہ یوسف زئی کی اسکول بس میں ان پر حملہ کیا گیا تھا اور وہ فائرنگ سے شدید زخمی ہو گئی تھیں جبکہ ان کے ساتھ ساتھ ان کی دو سہیلیاں بھی زخمی ہوئی تھیں۔

واضح رہے کہ تحریک طالبان نے اس حملے کی ذمے داری قبول کرتےہوئے بیان دیا تھا کہ اگر ملالہ یوسف زئی بچ گئیں تو انہیں دوبارہ نشانہ بنایا جائے گا۔

اس حصے سے مزید

پشاور: سڑک کنارے نصب دھماکا، دو افراد ہلاک

دوسری جانب جنداللہ بازار کے علاقے میں ایک ایف سی اہلکار کو نامعلوم مسلح افراد نے گولی مار کر ہلاک کردیا۔

اورکزئی: مکان میں دھماکا، کمانڈر سمیت 5 جنگجو ہلاک

آوٹ میلہ کے ایک گھر میں دھماکے سے وہاں موجود پانچ مشتبہ شدت پسند ہلاک ہوگئے، سرکاری ذرائع۔

پشاور میں فائرنگ، سابق رکن قومی اسمبلی کا پرسنل سیکرٹری ہلاک

مقتول بسم اللہ کو نامعلوم افراد نے رنگ روڈ تاج آباد کے علاقے میں گولیوں کا نشانہ بنایا، پولیس۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

تھوڑا سا احترام

آپ ایک مایوس، خوفزدہ بیوروکریسی سے کیا توقع کرسکتے ہیں جنہیں اپنی سمت کا علم نہ ہو؟

ایک عہد ساز فیصلہ

مذہب کا مطلب صرف بے لچک پن اور سخت گیری نہیں ہوتا، مذہبی آزادی میں ضمیر، خیالات، احساسات، عقیدہ سب شامل ہونا چاہئے-

بلاگ

گھریلو تشدد: پاکستانی 'کلچر' - حقیقت کیا ہے؟

پاکستانی سماج میں عورت مرد کی جائداد اور اس سے کمتر ہے چناچہ اس کے ساتھ کسی قسم کا سلوک روا رکھنا مرد کا پیدائشی حق ہے-

ریاستی تنہائی اور اجتماعی مہاجرت

جب تک سوچنے اور سوچ کے اظہار کے لیے ممکنہ حد تک ازادی موجود نہ ہو تب تک سماج میں تکثیریت پروان نہیں چڑھ سکتی

صحت عامہ کا بنیادی مسئلہ

سیاسی جماعتیں اپنے حامیوں کو محض نعرے لگوانے کے بجاۓ تعمیری سرگرمیوں کے لئے کیوں متحرک نہیں کرتیں؟

وزیرستان کے اکھاڑے سے

کشتی کا تو پتا نہیں اصلی ہے یا نہیں لیکن ہم نے ان پہلوانوں کو کسرت اکٹھے ہی کرتے دیکھا ہے۔