22 ستمبر, 2014 | 26 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

زمینوں پر قبضہ کراچی میں بدامنی کا سبب

کراچی رجسٹری- پی پی آئی فوٹو

کراچی: سپریم کورٹ نے کراچی میں بدامنی کی بڑی وجہ غیرقانونی تارکین وطن کی موجودگی کو قرار دیا ہے۔

عدالت عظمٰی کے پانچ رکنی بینچ جس کی صدارت جسٹس انور ظہیر جمالی  کررہے ہیں  کراچی بدامنی کیس کی سماعت کی۔ اس بنچ میں جسٹس خلجی عارف حسین، جسٹس سرمد جلال عثمانی، جسٹس امیر ہانی مسلم اور جسٹس گلزار احمد شامل تھے۔

کراچی بدامنی کیس کی سماعت کے دوران عدالت نے کراچی آپریشن میں حصہ لینے والے پولیس افسران و اہلکاروں کے قتل ہونے والوں کو معاوضہ نا دینے پر برہمی کا اظہار کرتے  ہوئے کہا کہ ان کی خدمات کو فراموش نہیں کرناچاہئے۔

کراچی بدامنی کیس کے دوران عدالت نے اپنے ریمارکس میں کہا  ہے کہ زمینوں پرقبضے اور غیر قانونی تارکین وطن کی بڑھتی ہوئی آبادی شہر میں بدامنی کی بڑی وجہ ہے جبکہ حکومت اب تک اس معاملے میں کوئی پالیسی وضح نہیں کرسکی ہے۔

عدالت نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ زمینوں پر قبضہ اور تجاوزات شہر  میں بد امنی کا اہم سبب ہے۔

عدالت نے چیف سیکریٹری سندھ، ڈائریکٹر ماسٹر پلان کے ایم سی اورسینئرممبر بورڈ آف ریونیو اورڈائریکٹر سروے کو توہین عدالت کا شوکازجاری کردیئے ہیں۔

عدالت کا کہنا تھا کہ سات سال قبل عدالت  نے زمینوں کے سروے کے متعلق حکم جاری کیا تھا مگر تاحال اس پر عمل درآمد نہیں ہوسکا۔

عدالت نے کہا کہ چار بڑے افسران چیف سیکریٹری سندھ، ڈائریکٹر ماسٹر پلان کے ایم سی کو نوٹس سندھ ہائیکورٹ کے حکم کے باوجود زمینوں کا سروے نہ کرنے پرجاری کیا گیا ہے۔

ایڈووکیٹ جنرل سندھ نے عدالت سے استدعا کی کہ چیف سیکریٹری کو شوکاز نوٹس جاری نہ کرے۔

اس کے علاوہ عدالت نے بیماری کے باعث رخصت پرجانے والے سینئرممبر بورڈ آف ریونیو کو آئندہ سماعت پر طلب کرلیا ہے۔

عدالت نے ایڈووکیٹ جنرل کو بورڈ آف ریونیو کے تمام ممبران کی فہرست فراہم کرنے کی ہدایت کی۔

دوران سماعت کراچی میٹروپولیٹن کارپوریشن (کےایم سی ) نے رپورٹ پیش کی کہ کراچی ڈویژن کے پانچ اضلاع اور اٹھارہ ٹاوٴنز ہیں ،تین ہزار پانچ اسکوائر کلومیٹر کا رقبہ ہے ، چودہ سو مربع کلو میٹر آباد ہے ۔

رپورٹ پر جسٹس گلزار احمد نے کہا کہ آپ نے شہریوں کے سکون اور تفریح کی جگہیں فروخت کردیں ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ لوگوں کے چلنے پھرنے اور بچوں کے کھیلنے کی جگہیں بھی نہیں چھوڑیں۔

اس کے علاوہ ان کا کہنا تھا کہ زمینوں کے اصل مالک غائب ہیں  اور رجسٹرز کے کھاتے میں ایک بھی اصل مالک نہیں ہے ۔

دوران سماعت الیکشن کمیشن سندھ کا عدالت میں موقف تھا کہ آئین کے مطابق جب تک مردم شماری نہ ہو حلقہ بندیاں نہیں ہوسکتیں،مردم شماری ہونے کے بعد الیکشن کمیشن حلقہ بندیاں کرسکتا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ سندھ میں اب تک مردم شماری نہیں ہوسکی اور اوروفاق کی جانب سے رپورٹ جاری نہیں ہوئی۔

آئی جی سندھ کا کہنا تھا کہ اغوا برائے تاوان کی وارداتوں میں کمی آئی ہے۔

تین روز تک جاری رہنے کے بعد عدالت نے سماعت اکیتس اکتوبر تک کے لئے ملتوی کردی ہے۔

اس حصے سے مزید

الطاف حسین کی سندھ میں چار صوبوں کی تجویز

انہوں نے سوال کیا کہ اگر سندھ ایک ہے تو چالیس اور ساٹھ فیصد کا کوٹہ کیوں مقرر کیا گیا ہے۔

کراچی: فائرنگ کے واقعات میں 6 افراد ہلاک

لانڈھی میں ہوٹل پرناشتہ کرنےوالے 3نوجوانوں کونشانہ بنایاگیا،پراناحاجی کیمپ،مومن آباداورلیاری میں ایک ایک شخص ہلاک ہوا

کراچی میں خودکش بمبار داخل

حساس ادارے کا سندھ حکومت کو خط، دہشت گرد کراچی میں داخل ہو گئے اور شہر کے کسی بھی مقام کو نشانہ بنا سکتے ہیں۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

پاکستان کی "مڈل کلاس" بغاوت

پاکستان کے مڈل کلاس لوگ ہی جمہوریت کے سب سے بڑے مخالف ہیں اور کچھ کیسز میں تو جمہوریت کی مخالفت بغاوت کی حد تک شدید ہے۔

!میرے پیارے اسلام آباد

میں آپ سے معافی چاہتا ہوں کہ میں نے آپ کی جانب دو دھرنے بھیجے ہیں، جنہوں نے آپ کا امن و سکون تباہ کر دیا ہے۔

بلاگ

بلوچ نیشنلزم میں زبان کا کردار

لسانی معاملات پر غیر دانشمندانہ طریقہ سے اصرار مزید ناراضگی اور پیچیدگیوں کا سبب بن سکتا ہے، جو شاید مناسب قدم نہیں۔

خواندگی کا عالمی دن اور پاکستان

تعلیم کو سرمایہ کاروں کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا گیا ہے جن کے لیے تعلیم ایک جنس ہے جسے بیچ کر منافع کمایا جاسکتا ہے-

ڈرامہ ریویو: چپ رہو - حساس ترین موضوع پر بہترین پیشکش

زیادتی جیسے واقعات ہر وقت خبروں میں رہتے ہیں اس حوالے سے یہ ڈرامہ شعور اجاگر کرنے میں اہم کردار ادا کرسکتا ہے۔

میں باغی ہوں

اس ملک میں کہیں قانون کی حکمرانی نہیں، ہر جگہ لوٹ مار مچی ہے- کسی کو قانون کا پاس نہیں- تبدیلی آئی تو سب کا احتساب ہوگا-