24 ستمبر, 2014 | 28 ذوالقعد, 1435
ڈان نیوز پیپر

کراچی: پانچ طالبعلموں سمیت اٹھارہ افراد قتل

کراچی میں بدامنی کے پیش نظر شہر کی اہم شاہراہ پر رینجرز کے اہلکار موجود ہیں۔ فائل فوٹو آن لائن

کراچی: صوبہ سندھ کے دارالحکومت کراچی کے مختلف علاقوں میں ٹارگٹ کلنگ کے واقعات میں ایک گھنٹے کے دوران سات افراد جاں بحق ہوگئے جس کے بعد شہر قائد میں آج ہلاک کیے گئے افراد کی تعداد پندرہ ہو گئی ہے۔ شہر کے مختلف علاقوں میں  کشیدگی کے بعد کاروبار بھی بند ہو گئے۔

ڈان نیوز کے مطابق گلشن اقبال بلاک ٹو میں نامعلوم افراد نے چائے کے ہوٹل پر فائرنگ کردی جس سے عبدالخالق،عمران،شمس الرحمان اور عبداللہ سمیت پانچ افراد ہلاک  اور دو زخمی ہوگئے۔ واقعے کے بعد علاقے میں خوف و ہراس پھیل گیا اور پولیس کی بھاری نفری موقع پر پہنچ گئی۔

حادثہ سنی مکتبہ فکر کے دیوبندی مدرسے کے سامنے پیش آیا جہاں طالبعلم سامنے چائے پینے کیلیے جمع ہوئے تھے، مذکورہ مدرسے میں 18 سے 22 کی عمر کے درمیان طالبعلم زیر تعلیم ہیں۔

ایک سینئر پولیس آفیشل شاہد حیات نے اے ایف پی کو بتایا کہ موٹر سائیکل پر سوار مسلح افراد خصوصاً مذکورہ مدرسے کے طالبعلموں کو نشانہ بنانے کے بعد فرار ہو گئے۔

انہوں نے مزید بتایا کہ حادثہ جاری فرقہ وارانہ اور سیاسی ٹارگٹ کلنگ کی لہر کا حصہ ہے جس میں رواں سال کم از کم گیارہ سو سے زیادہ افراد مارے جا چکے ہیں۔

ایک اور پولیس آفیشل محمد حفیظ نے اے ایف پی کو بتایا کہ پولیس اس بات کی تحقیقات کر رہی ہے کہ خصوصاً اسی مدرسے کے طالبعلموں کو یوں نشانہ بنایا گیا۔

دوسری جانب نارتھ ناظم آباد میں سیفی کالج کے قریب شرپسندوں نے فائرنگ کردی جس کے نتیجے میں تین افراد جان سے ہاتھ دھو بیٹھے، ہلاک ہونے والوں کی لاشیں عباسی اسپتال لائی گئیں۔

بعدازاں بفرزون میں کار پر فائرنگ سے توقیق جبکہ کھوکھراپار میں فائرنگ سے سلیم ہلاک ہوگیا، سہراب گوٹھ الآصف اسکوائر کے قریب فائرنگ سے نوجوان چل بسا۔

اس سے قبل کورنگی چھ نمبر پر نامعلوم افراد نے ایک دکان پر فائرنگ کر دی جس سے دو افراد ہلاک ہو گئے۔ قبل ازیں کورنگی کے ہی علاقے جمعہ گوٹھ میں فائرنگ سے قوم پرست جماعت کا کارکن چل بسا۔

دریں اثنا کراچی کے علاقے پاک کالونی میں ریکسر پل کے قریب نامعلوم مسلح افراد کی فائرنگ سے صادق، بابر، منور اور شاہد ہلاک ہو گئے۔

واقعے کے بعد پولیس اور ریسکیو ٹیمیں جائے وقوعہ پر پہنچیں اور لاشوں کو سول اسپتال منتقل کیا۔

اس حصے سے مزید

کراچی یونیورسٹی میں تدریسی عمل بحال کرنے کا فیصلہ

یونیورسٹی کی جنرل باڈی کے اجلاس میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ کل سے جامعہ میں تدریسی عمل بحال کردیا جائے گا۔

دو سال کے لیے ٹیکنو کریٹس کی حکومت قائم کی جائے، الطاف حسین

لندن میں گورنر پنجاب کے ساتھ ملاقات کے دوران متحدہ کے قائد نے کہا کہ ثالثی کے لیے چوہدری سرور مناسب شخصیت ہیں۔

پیپلزپارٹی ایم پی اے کا گن پوائنٹ پر استعفی لینے کا الزام

پروین جونیجو نے گزشتہ برس کے عام انتخابات میں دادو سے پی ایس 76 سے کامیابی حاصل کی تھی۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

سوشلزم کیوں؟

اگر ہم مسلسل بحث کرسکتے ہیں کہ جمہوریت کیوں نہیں، شریعت کیوں نہیں، تو اس سوال پر بھی بحث ضروری ہے کہ سوشلزم کیوں نہیں؟

مڑی تڑی باتیں اور مقاصد

چیزوں کو اپنی مرضی کے مطابق توڑ مروڑ کر پیش کرنے، اور غیر آئینی اقدامات سے پاکستان کے مسائل میں صرف اضافہ ہی ہوگا۔

بلاگ

مووی ریویو: 'خوبصورت' - فواد اور سونم کی خوبصورت کہانی

اپنے پُر مزاح کرداروں کے باوجود فلم شوخ اور رومانٹک ڈرامہ ہے، جسے آپ باآسانی ڈزنی کی طلسماتی کہانی کہہ سکتے ہیں-

کراچی میں بجلی کا مسئلہ اور نیپرا کا منفی کردار

اپنی نااہلی کی وجہ سے نیپرا نے بیرونی سرمایہ کاروں کو مشکل میں ڈال رکھا ہے، جن میں سے کچھ تو کام شروع کرنے کو تیار ہیں۔

خواب دو انقلابیوں کے

ایک انقلابی خود کو وزیر اعظم بنتا دیکھ رہا ہے تو دوسرا صدارتی محل میں مریدوں سے ہاتھ پر بوسے کروانے کے خواب دیکھ رہا ہے۔

کوئی ان سے نہیں کہتا۔۔۔

ریڈ زون کے محفوظ باسیو! ہمیں دہشت گردوں، ڈاکوؤں، چوروں، اغواکاروں، تمہاری افسر شاہی اور پولیس سے بچانے والا کوئی نہیں۔