24 جولائ, 2014 | 25 رمضان, 1435
ڈان نیوز پیپر

'افغان انٹیلی جنس سربراہ پر حملہ کا منصوبہ پاکستان میں بنا'

File picture shows Afghanistan's Intelligence Chief Khalid speaking to the media in the Arghandab district of Kandahar province
افغان نیشنل ڈائریکٹوریٹ آف سیکورٹی کے سربراہ اسد اللہ خالد۔—رائٹرز

کابل: صدر حامد کرزئی نے الزام لگایا ہے کہ افغان انٹیلی جنس کے سربراہ اسد اللہ خالد پرحملہ کی منصوبہ بندی پاکستان کے شہر کوئٹہ میں کی گئی۔

نیشنل ڈائریکٹوریٹ آف سیکورٹی(این ڈی ایس) کے سربراہ خالد پر جمعرات کو کابل کے  وسطی علاقے تائیمان میں خود کش حملہ کیا گیا تھا۔

حملے کے بعد گزشتہ روز خالد کو بگرام میں امریکی فوجی ہسپتال منتقل کردیا گیا تھا، جہاں ان کی حالت خطرے سے باہر بتائی جاتی ہے۔

ہفتہ کو ایک پریس کانفرنس سے بات چیت میں کرزئی نے پاکستان پر براہ راست الزام لگانے سے گریز کیا تاہم ان کا کہنا تھا کہ وہ اس معاملے پر اسلام آباد سے بات کریں گے۔

افغان طالبان نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کی تھی لیکن کرزئی کا کہنا ہے کہ عسکریت پسند کابل کے وسط میں اس طرح کی کارروائی نہیں کر سکتے۔

افغان صدر کا کہنا تھا کہ 'بظاہر دوسرے حملوں کی طرح اس کی ذمہ داری طالبان نے قبول کی ہے لیکن اپنے جسم کے اندر بارودی مواد چھپا کر اس طرح کی پیچیدہ کارروائی ان کی نہیں ہو سکتی'۔

' یہ انتہائی مہارت سے کیا گیا حملہ ہے۔۔۔۔ طالبان ایسا نہیں کر سکتے ، اس کے پیچھے کوئی بڑا اور منظم ہاتھ ملوث ہے'۔

افغان صدر نے کہا کہ وہ یہ معاملہ ترکی میں پاکستانی حکام سے ملاقات کے دوران اٹھائیں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ 'یہ ایک اہم مسئلہ ہے اور ہم امید کرتے ہیں کہ پاکستانی حکومت ہمیں اس حوالے سے درست معلومات دینے کے علاوہ سنجیدگی سے تعاون کرے گی تاکہ ہمارے خدشات ختم ہو سکیں'۔

اس حصے سے مزید

کابل: خود کش حملے میں تین غیر ملکی مشیر ہلاک

ابتدائی رپورٹس میں غیر ملکی مشیروں کی شہریت کے بارے تفصیلات موصول نہیں ہوسکی ہیں۔

'پاکستان، افغانستان ناکام ہوئے تو القاعدہ واپس آ جائے گی'

افغانستان میں کامیابی کا دارومدار پاکستان کی اپنی سرحدوں میں شدت پسندوں کے خلاف کارروائی پر بھی ہے، امریکی جنرل۔

کابل ایئرپورٹ پر طالبان کا حملہ، پروازیں منسوخ

ایک افغان جنرل افضل امان کا کہنا ہے کہ مسلح افراد نے کابل میں محوِ پرواز آئی ایس اے ایف کے جیٹ طیاروں پر بھی فائرنگ کی۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

بے وجہ پوائنٹ اسکورنگ

ہوسکتا ہے عمران خان پی ایم ایل-ن کی حکومت گرانا چاہتے ہوں لیکن کیا وہ واقعی ملک اور اسکے جمہوری اداروں کے لئے خطرہ ہیں؟

کیا بڑا بہتر ہے؟

ہم اپنی جنوب ایشیائی شناخت سے پیچھا کیوں چھڑانا چاہتے ہیں جو تاریخی اعتبار سے عرب کے مقابلے میں کہیں زیادہ مالامال ہے؟

بلاگ

وزیرستان کے اکھاڑے سے

کشتی کا تو پتا نہیں اصلی ہے یا نہیں لیکن ہم نے ان پہلوانوں کو کسرت اکٹھے ہی کرتے دیکھا ہے۔

کھیلنے دو: گراؤنڈز کہاں ہیں؟

سیدھی سی بات ہے، ملائی تبھی زیادہ اور بہترین ہوگی جب دودھ زیادہ ہوگا-

مووی ریویو: پیزا - پلاٹ اچھا ہے

اگرچہ سکرین پلے کافی کمزور ہے مگر فلم کی کہانی میں آنے والے موڑ دیکھنے والوں کی دلچسپی برقرار رکھتے ہیں۔

جہادی برائے فروخت

اگر اب بھی سمجھ نہ آئی تو پاکستان کا حشر بھی عراق و شام سے مختلف نہیں ہوگا۔