25 جولائ, 2014 | 26 رمضان, 1435
ڈان نیوز پیپر

لا پتہ افراد کیس: پشاور ہائی کورٹ میں اعلیٰ افسران کی طلبی

پشاور ہائی کورٹ فائل فوٹو

پشاور: منگل کے روز لاپتہ افراد کیس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ  نے وفاقی اور صوبائی اداروں کے سربراہان کو عدالت میں پیش ہونے کے احکامات جاری کر دیئے۔

پشاور ہائی کورٹ میں لاپتہ افراد کیس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ جسٹس دوست محمد خان نے وفاقی اور صوبائی انٹیلی جنس اداروں کے سربراہان اور ہوم سیکرٹریز کو 14 فروری کو عدالت میں پیش ہونے کا حکم دیا۔

ان کا کہنا تھا کہ 14 فروری کو عدالت میں پیش نہ ہونے پر ان اداروں کے اعلی حکام کے خلاف کاروائی ہو گی  اور ان کی تنخواہیں بند کرنے سمیت دیگر مراعات بھی روک دی جائیں گی۔

جسٹس دوست محمد خان اور خاتون جسٹس ارشاد قیصر نے لاپتہ افراد کیس کی سماعت کے دوران کہا کہ ریاست کے اندر ریاست بنائی جا رہی ہے۔

چیف جسٹس نے سانحہ باڑہ کو نوٹس لیتے ہوئے کہا کہ کہ اگر بااثر افراد دھرنا دے تو حکومت ان کے ساتھ شامل ہو جاتی ہے مگر جب باڑہ متاثرین نے احتجاج کیا تو ان پر شیلنگ کی گئی اور ان کے میتوں کی بے حرمتی کی گئی۔

اس موقع پر اٹارنی جنرل نے کہا کہ ہوم سیکرٹی علالت کے باعث عدالت میں پیش نہیں ہو سکے۔ چیف جسٹس نے کہا کہ ہوم سیکرٹری تو علالت کے باعث نہیں آئے، ان کی جگہ متبادل افسر کیوں پیش نہیں ہوئے۔

چیف جسٹس نے کہا کہ اگر پورا صوبہ ہوم سیکرٹری چلا رہے ہیں تو اسمبلیاں کیا کر رہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ عدالت سے مذاق بند کیا جائے ۔

دوست محمد خان کا کہنا تھا کہ جون سے ہم لاپتہ افراد کیس کی سماعت کر رہے ہیں مگر اب تک کوئی پیشرفت نہیں ہو سکی ہے۔

اس حصے سے مزید

اورکزئی: مکان میں دھماکا، کمانڈر سمیت 5 جنگجو ہلاک

آوٹ میلہ کے ایک گھر میں دھماکے سے وہاں موجود پانچ مشتبہ شدت پسند ہلاک ہوگئے، سرکاری ذرائع۔

پشاور میں فائرنگ، سابق رکن قومی اسمبلی کا پرسنل سیکرٹری ہلاک

مقتول بسم اللہ کو نامعلوم افراد نے رنگ روڈ تاج آباد کے علاقے میں گولیوں کا نشانہ بنایا، پولیس۔

سراج الحق وزیر خزانہ خیبر پختونخوا کے عہدے سے مستعفی

جماعت اسلامی امیر سراج الحق نے وزیر خزانہ خیبر پختونخوا کے عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

تھوڑا سا احترام

آپ ایک مایوس، خوفزدہ بیوروکریسی سے کیا توقع کرسکتے ہیں جنہیں اپنی سمت کا علم نہ ہو؟

ایک عہد ساز فیصلہ

مذہب کا مطلب صرف بے لچک پن اور سخت گیری نہیں ہوتا، مذہبی آزادی میں ضمیر، خیالات، احساسات، عقیدہ سب شامل ہونا چاہئے-

بلاگ

گھریلو تشدد: پاکستانی 'کلچر' - حقیقت کیا ہے؟

پاکستانی سماج میں عورت مرد کی جائداد اور اس سے کمتر ہے چناچہ اس کے ساتھ کسی قسم کا سلوک روا رکھنا مرد کا پیدائشی حق ہے-

ریاستی تنہائی اور اجتماعی مہاجرت

جب تک سوچنے اور سوچ کے اظہار کے لیے ممکنہ حد تک ازادی موجود نہ ہو تب تک سماج میں تکثیریت پروان نہیں چڑھ سکتی

صحت عامہ کا بنیادی مسئلہ

سیاسی جماعتیں اپنے حامیوں کو محض نعرے لگوانے کے بجاۓ تعمیری سرگرمیوں کے لئے کیوں متحرک نہیں کرتیں؟

وزیرستان کے اکھاڑے سے

کشتی کا تو پتا نہیں اصلی ہے یا نہیں لیکن ہم نے ان پہلوانوں کو کسرت اکٹھے ہی کرتے دیکھا ہے۔