02 اکتوبر, 2014 | 6 ذوالحجہ, 1435
ڈان نیوز پیپر

عاصمہ جہانگیر بطور نگراں وزیراعظم قبول نہیں،عمران خان

تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان عوامی جلسے سے خطاب کر رہے ہیں۔ فائل فوٹو اے پی۔۔۔
تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان عوامی جلسے سے خطاب کر رہے ہیں۔ فائل فوٹو اے پی۔۔۔

لاہور: پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ ان کی پارٹی کو عاصمہ جہانگیر بطور نگران وزیراعظم قبول نہیں۔

پیر کو لاہور میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ نگران وزیراعظم کے حوالے سے پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل ن) اور پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے درمیان مک مکا ہوچکا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ایسا پل کبھی نہ بننے کے لیے ٹوٹ چکا ہے جو تحریک انصاف اور ن لیگ کو ملا سکے۔

ان کا کہنا تھا کہ مسلم لیگ ن کے ساتھ مل کر احتجاج کرنے کیبجائے تحریک انصاف علیحدہ احتجاج کرے گی۔

پی ٹی آئی چیئرمین کا کہنا تھا کہ صوبہ جنوبی پنجاب 'الیکشن اسٹنٹ' کے سوا کچھ بھی نہیں ہے۔

اس موقع پر انہوں نے صدر آصف علی زرداری سے استعفٰی کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ انکی موجودگی میں شفاف انتخابات ممکن نہیں ہیں۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ صدر زرداری کے مستعفی ہوتے ہی چیئرمین سینیٹ کا صدر بننا پی ٹی آئی کیلیے قابل قبول ہوگا۔

انہوں نے مزید کہا کہ تحریک انصاف انتخابات کا بائیکاٹ نہیں کرے گی اور الیکشن جیت کر دکھائے گی۔

اس حصے سے مزید

جاویدہاشمی تحریک انصاف سے مستعفی،الیکشن میں مسلم لیگی حمایت حاصل

حکومتی جماعت کے وفد سے ملاقات کے بعد ان کا کہنا تھا کہ ایسی پارٹی کا کارکن نہیں رہنا چاہتا جو جمہوریت کے خلاف سازش کرے۔

امید ہے عید سے قبل دھرنے ختم ہوجائیں گے، رحمان ملک

سابق وزیرِ داخلہ کا کہنا تھا کہ فریقین کو لچک کا مظاہرہ کرنا ہوگا، سیاست میں مذاکرات کا راستہ بند نہیں ہوتا۔

کھاریاں: فوج کانیشنل کاؤنٹر ٹیررزم سینٹر قائم

انسداددہشت گردی مرکزمیںٰ فوجی دستوں،پولیس، کانسٹیبلری،لیویزسمیت غیرملکی فورسزکو دہشت گردی سے نمٹنے کی تربیت دی جائے گی۔


تبصرے بند ہیں.
سروے
مقبول ترین
قلم کار

ماؤں اور بچوں کے قاتل ہم

پاکستان سے کم فی کس آمدنی رکھنے والے ممالک پیدائش کے دوران ماؤں اور بچوں کی اموات پر قابو پا چکے ہیں۔

تبدیلی کا پیش خیمہ

اکثر ایسے بڑے واقعات پیش آتے ہیں جو تبدیلی کے عمل کو تیز کردیتے ہیں، مگر ایسے حالات کسی فرد کے پیدا کردہ نہیں ہوتے۔

بلاگ

!گو نواز گو

اس ملک میں پڑھے لکھے لوگوں کی قدر ہی نہیں۔ جب تک پڑھے لکھوں کو وی آئی پی پروٹوکول نہیں دیا جاتا یہ ملک ترقی نہیں کرسکتا

قدرتی آفات اور پاکستان

قدرتی آفات سے پہلے انتظامات پر ایک ڈالر جبکہ بعد میں سات ڈالر خرچ ہوتے ہیں، اس کے باوجود ہم پہلے سے انتظامات نہیں کرتے۔

مقابلہ خوب ہے

کوئی دنیا کے در در پر پھیلے ہمارے کشکول کی زیارت کرے، پھر اس میں خیرات ڈالنے والوں کو فتح کرنے کے ہمارے عزم بھی دیکھے۔

پاکستان میں ذہنی بیماریاں اور ہماری بے حسی

آخر ذہنی بیماریوں کے شکار کتنے اور لوگوں کو اپنے گھرانوں کی بے حسی، اور معاشرے کی جانب سے ٹھکرائے جانے کو جھیلنا پڑے گا؟