20 اپريل, 2014 | 19 جمادی الثانی, 1435
ڈان نیوز پیپر

عاصمہ جہانگیر بطور نگراں وزیراعظم قبول نہیں،عمران خان

تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان عوامی جلسے سے خطاب کر رہے ہیں۔ فائل فوٹو اے پی۔۔۔
تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان عوامی جلسے سے خطاب کر رہے ہیں۔ فائل فوٹو اے پی۔۔۔

لاہور: پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ ان کی پارٹی کو عاصمہ جہانگیر بطور نگران وزیراعظم قبول نہیں۔

پیر کو لاہور میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ نگران وزیراعظم کے حوالے سے پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل ن) اور پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے درمیان مک مکا ہوچکا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ایسا پل کبھی نہ بننے کے لیے ٹوٹ چکا ہے جو تحریک انصاف اور ن لیگ کو ملا سکے۔

ان کا کہنا تھا کہ مسلم لیگ ن کے ساتھ مل کر احتجاج کرنے کیبجائے تحریک انصاف علیحدہ احتجاج کرے گی۔

پی ٹی آئی چیئرمین کا کہنا تھا کہ صوبہ جنوبی پنجاب 'الیکشن اسٹنٹ' کے سوا کچھ بھی نہیں ہے۔

اس موقع پر انہوں نے صدر آصف علی زرداری سے استعفٰی کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ انکی موجودگی میں شفاف انتخابات ممکن نہیں ہیں۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ صدر زرداری کے مستعفی ہوتے ہی چیئرمین سینیٹ کا صدر بننا پی ٹی آئی کیلیے قابل قبول ہوگا۔

انہوں نے مزید کہا کہ تحریک انصاف انتخابات کا بائیکاٹ نہیں کرے گی اور الیکشن جیت کر دکھائے گی۔

اس حصے سے مزید

'طالبان کے مطالبات قبول کرنے میں کوئی حرج نہیں'

جماعتِ اسلامی کے امیر سراج الحق کا کہنا تھا کہ حکومت کو چاہیے کہ وہ مطالبات پر سنجیدگی سے غور کرے۔

وزیر اعظم کیخلاف توہینِ عدالت کی درخواست مسترد

لاہور ہائی کورٹ نے اپنے فیصلے میں مؤقف اختیار کیا کہ وزیرِ اعظم کو آئین کے تحت استثنیٰ حاصل ہے۔

ڈیرہ غازی خان: ٹریفک حادثے میں 14 ہلاکتیں

یہ واقعہ ڈیرہ غازی خان کے علاقے کوٹ چٹھہ میں اس وقت پیش آیا جب ایک تیز رفتار بس اسٹاپ پر کھڑے لوگوں پر چڑھ گئی۔


تبصرے بند ہیں.
مقبول ترین
بلاگ

دنیاۓ صحافت: داستاں تک بھی نہ ہوگی داستانوں میں

ایک فوجی کی طرح صحافی کو بھی ہرگز اکیلا نہیں چھوڑا جاسکتا، یہ سوچنا کہ یہ ہماری جنگ نہیں، سراسر حماقت ہے-

2 - پاکستان کی شہری تاریخ ... ہمیں سب ہے یاد ذرا ذرا

بھٹو حکومت کے ابتدائی سالوں میں قوم کا مزاج یکسر تبدیل ہو گیا تھا، کیونکہ ملک ایک نئے پاکستان کی طرف بڑھ رہا تھا-

سچ، گولی اور بے بس جرنلسٹ

حامد میر پر حملہ ایک بار پھر صحافی برادری کی بے بسی کی طرف اشارہ کرتا ہے

دو قومی نظریہ اور ہندوستانی اقلیتیں

دو قومی نظریہ مسلمانوں اور ہندوؤں میں تو تفریق کرتا ہے لیکن دیگر اقلیتوں، خاص کر دلتوں کو یکسر فراموش کرتا ہے۔